جیت کر بازیٔ الفت کو بھی ہارا جائے

عبدالرحمان خان وصفی بہرائچی

جیت کر بازیٔ الفت کو بھی ہارا جائے

عبدالرحمان خان وصفی بہرائچی

MORE BYعبدالرحمان خان وصفی بہرائچی

    جیت کر بازیٔ الفت کو بھی ہارا جائے

    اس طرح حسن کو شیشے میں اتارا جائے

    اب تو حسرت ہے کہ برباد کیا ہے جس نے

    اس کا دیوانہ مجھے کہہ کے پکارا جائے

    آپ کے حسن کی توصیف سے مقصد ہے مرا

    نقش فطرت کو ذرا اور ابھارا جائے

    تم ہی بتلاؤ کہ جب اپنے ہی بیگانے ہیں

    دہر میں اپنا کسے کہہ کے پکارا جائے

    ذہن خوددار پہ یہ بار ہی ہو جاتا ہے

    غیر کے سامنے دامن جو پسارا جائے

    کتنی دشوار ہے پابندی آئین وفا

    آہ بھی لب پہ اگر آئے تو مارا جائے

    شب تو کٹ جائے گی یادوں کے سہارے وصفیؔ

    فکر اس کی ہے کہ دن کیسے گزارا جائے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY