جیون کے کئی راز بتاتا ہے جزیرہ

انس نبیل

جیون کے کئی راز بتاتا ہے جزیرہ

انس نبیل

MORE BYانس نبیل

    جیون کے کئی راز بتاتا ہے جزیرہ

    شاعر کو نئی راہ سجھاتا ہے جزیرہ

    کیا دور ہے خود موج لگاتی ہے یہ تہمت

    دنیا میں بہت شور مچاتا ہے جزیرہ

    اللہ کی تخلیق کا انداز تو دیکھو

    وہ آب کی کھیتی میں اگاتا ہے جزیرہ

    جیون کا سفر دکھ کے سمندر میں ہے اکثر

    میلوں میں کبھی خوشیوں کا آتا ہے جزیرہ

    ہو نرغۂ باطل میں کھڑا جیسے مجاہد

    موجوں میں یوں ہی سر کو اٹھاتا ہے جزیرہ

    ہر شب تری یادوں کے سمندر میں اتر کر

    اک پارۂ دل خود کو بناتا ہے جزیرہ

    بیٹھا ہے حسیں کوئی سمندر کے کنارے

    اٹھ اٹھ کے جسے دیکھتا جاتا ہے جزیرہ

    محبوب سے جب پوچھتا ہوں عشق کا انجام

    انگلی کے اشارے سے دکھاتا ہے جزیرہ

    اے میرے نبیلؔ آپ کے جیسا ہی سدا سے

    تنہائی کا غم روز اٹھاتا ہے جزیرہ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY