جن کی یادیں ہیں ابھی دل میں نشانی کی طرح

والی آسی

جن کی یادیں ہیں ابھی دل میں نشانی کی طرح

والی آسی

MORE BYوالی آسی

    جن کی یادیں ہیں ابھی دل میں نشانی کی طرح

    وہ ہمیں بھول گئے ایک کہانی کی طرح

    دوستو ڈھونڈ کے ہم سا کوئی پیاسا لاؤ

    ہم تو آنسو بھی جو پیتے ہیں تو پانی کی طرح

    غم کو سینے میں چھپائے ہوئے رکھنا یارو

    غم مہکتے ہیں بہت رات کی رانی کی طرح

    تم ہمارے تھے تمہیں یاد نہیں ہے شاید

    دن گزرتے ہیں برستے ہوئے پانی کی طرح

    آج جو لوگ ترے غم پہ ہنسے ہیں والیؔ

    کل تجھے یاد کریں گے وہی فانیؔ کی طرح

    مأخذ :
    • کتاب :  Anoop Jalota ki Ghazalen (Pg. 50)
    • Author : Anoop Jalota
    • مطبع : Daimond Pocket Books, Daryaganj

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY