جس جگہ آگہی مقید ہے

احمد سجاد بابر

جس جگہ آگہی مقید ہے

احمد سجاد بابر

MORE BYاحمد سجاد بابر

    جس جگہ آگہی مقید ہے

    اس جگہ زندگی مقید ہے

    بجھ رہے ہیں گلاب سے چہرے

    کیا یہاں تازگی مقید ہے

    چاند جس کا طواف کرتا تھا

    اب وہاں خاک سی مقید ہے

    ایک عرضی لئے میں حاضر ہوں

    منصفا روشنی مقید ہے

    خاک کربل میں آج بھی لوگو

    اک عجب تشنگی مقید ہے

    کچے گھر کے نصیب میں بابرؔ

    جا بجا خستگی مقید ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY