جس کو مانا تھا خدا خاک کا پیکر نکلا

وحید اختر

جس کو مانا تھا خدا خاک کا پیکر نکلا

وحید اختر

MORE BYوحید اختر

    جس کو مانا تھا خدا خاک کا پیکر نکلا

    ہاتھ آیا جو یقیں وہم سراسر نکلا

    اک سفر دشت خرابی سے سرابوں تک ہے

    آنکھ کھولی تو جہاں خواب کا منظر نکلا

    کل جہاں ظلم نے کاٹی تھیں سروں کی فصلیں

    نم ہوئی ہے تو اسی خاک سے لشکر نکلا

    خشک آنکھوں سے اٹھی موج تو دنیا ڈوبی

    ہم جسے سمجھے تھے صحرا وہ سمندر نکلا

    زیر پا اب نہ زمیں ہے نہ فلک ہے سر پر

    سیل تخلیق بھی گرداب کا منظر نکلا

    گم ہیں جبریل و نبی گم ہیں کتاب و ایماں

    آسماں خود بھی خلاؤں کا سمندر نکلا

    عرش پر آج اترتی ہے زمینوں کی وحی

    کرۂ خاک ستاروں سے منور نکلا

    ہر پیمبر سے صحیفے کا تقاضا نہ ہوا

    حق کا یہ قرض بھی نکلا تو ہمیں پر نکلا

    گونج اٹھا نغمۂ کن دشت تمنا میں وحیدؔ

    پائے وحشت حد امکاں سے جو باہر نکلا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    جس کو مانا تھا خدا خاک کا پیکر نکلا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY