جسم و جاں کس غم کا گہوارہ بنے

حنیف فوق

جسم و جاں کس غم کا گہوارہ بنے

حنیف فوق

MORE BYحنیف فوق

    جسم و جاں کس غم کا گہوارہ بنے

    آگ سے نکلے تو انگارہ بنے

    شام کی بھیگی ہوئی پلکوں میں پھر

    کوئی آنسو آئے اور تارا بنے

    لوح دل پہ نقش اب کوئی نہیں

    وقت ہے آ جاؤ شہ پارا بنے

    اب کسی لمحہ کو منزل مان لیں

    در بدر پھرتے ہیں بنجارا بنے

    کم ہو گر جھوٹے ستاروں کی نمود

    یہ زمیں بھی انجمن آرا بنے

    جرم ناکردہ گناہی ہے بہت

    زندگی ہی کیوں نہ کفارہ بنے

    توڑ ڈالیں ہم نظام خستگی

    یہ جہاں کہنہ دوبارا بنے

    مأخذ :
    • کتاب : Pakistani Adab (Pg. 443)
    • Author : Dr. Rashid Amjad
    • مطبع : Pakistan Academy of Letters, Islambad, Pakistan (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY