جتنی تیزی سے آ رہا تھا وہ

عاجز ہنگن گھاٹی

جتنی تیزی سے آ رہا تھا وہ

عاجز ہنگن گھاٹی

MORE BYعاجز ہنگن گھاٹی

    جتنی تیزی سے آ رہا تھا وہ

    لوٹ کر دور جا رہا تھا وہ

    صرف رشتے کی بات پر یارو

    عمر اپنی چھپا رہا تھا وہ

    تتلیاں جتنی سامنے آئیں

    رنگ سب کے چرا رہا تھا وہ

    دل کسی سے نہیں ملا اس کا

    ہاتھ سب سے ملا رہا تھا وہ

    زخم خوردہ صداؤں کو عاجزؔ

    خامشی سے اٹھا رہا تھا وہ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY