جو اپنی چشم تر سے دل کا پارہ چھوڑ جاتا ہے

شارب مورانوی

جو اپنی چشم تر سے دل کا پارہ چھوڑ جاتا ہے

شارب مورانوی

MORE BYشارب مورانوی

    جو اپنی چشم تر سے دل کا پارہ چھوڑ جاتا ہے

    وہی محفل میں غم کا استعارہ چھوڑ جاتا ہے

    میاں غربت میں ہر اک بے سہارا چھوڑ جاتا ہے

    اندھیرا ہو تو سایہ بھی ہمارا چھوڑ جاتا ہے

    جدھر جلوے بکھرتے ہیں ادھر کرتا نہیں نظریں

    شکست خواب کے ڈر سے نظارہ چھوڑ جاتا ہے

    مجھے سیراب کرتا جا اگر تو اک سمندر ہے

    فقط پیاسے پہ کیوں الزام سارا چھوڑ جاتا ہے

    ہر اک ہے محو حیرت وہ کرشمہ ساز ہے ایسا

    سر محفل جو اک رنگیں نظارہ چھوڑ جاتا ہے

    میں اکثر کشتیٔ موج بلا پر سیر کرتا ہوں

    مجھے ساحل پہ اس کا اک اشارہ چھوڑ جاتا ہے

    عجب ہے میرا محسن بھی کہ جاتے وقت وہ اکثر

    مری پلکوں پہ اک روشن ستارہ چھوڑ جاتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY