جو اشک دل پہ گرے وہ شمار کر نہ سکی

ایمن جنید خان

جو اشک دل پہ گرے وہ شمار کر نہ سکی

ایمن جنید خان

MORE BYایمن جنید خان

    جو اشک دل پہ گرے وہ شمار کر نہ سکی

    میں اس کے جذبوں کو دل پہ سوار کر نہ سکی

    وہ کر رہا تھا بغاوت پہ مجھ کو آمادہ

    مگر قبیلے کی عزت پہ وار کر نہ سکی

    وہ سبز باغ دکھاتا تھا مجھ کو وعدوں کے

    یہ آنکھ اس پہ مگر انحصار کر نہ سکی

    بچھڑ کے تجھ سے مری خود سے جنگ جاری رہی

    میں دل کی دنیا کبھی سازگار کر نہ سکی

    وہ میرے ساتھ ہے ہم زاد کی طرح ایمنؔ

    میں جس پہ حالت دل آشکار کر نہ سکی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY