جو بھی منجملۂ آشفتہ سرا ہوتا ہے

سید عابد علی عابد

جو بھی منجملۂ آشفتہ سرا ہوتا ہے

سید عابد علی عابد

MORE BYسید عابد علی عابد

    جو بھی منجملۂ آشفتہ سرا ہوتا ہے

    زینت محفل صاحب نظراں ہوتا ہے

    یہی دل جس کو شکایت ہے گراں جانی کی

    یہی دل کار گہ شیشہ گراں ہوتا ہے

    شاخ گلزار کے سائے میں کہاں دم لیجے

    کہ یہاں خون کا سیل گزراں ہوتا ہے

    کس کو دکھلائیے اپنوں کی ملامت کا سماں

    کہ یہ اسلوب حدیث دگراں ہوتا ہے

    کس کو بتلائیے وہ رابطۂ ناز و نیاز

    ان کی محفل میں جو اے دیدہ وراں ہوتا ہے

    کبھی کرتی ہے تجلی نگرانی دل کی

    کبھی دل سوئے تجلی نگراں ہوتا ہے

    مجھ پہ ہوتے ہیں غم دل کے صحیفے نازل

    جن میں افسانۂ عالی گہراں ہوتا ہے

    دل بھی دیتا ہے مجھے مشورۂ ترک وفا

    کچھ تقاضائے جہان گزراں ہوتا ہے

    میں تو ہوں شیفتۂ رنگ تغزل عابدؔ

    کہ یہی شاہد خونیں جگراں ہوتا ہے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    سید عابد علی عابد

    سید عابد علی عابد

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY