جو دل بر کی محبت دل سے بدلے

غلام مولیٰ قلق

جو دل بر کی محبت دل سے بدلے

غلام مولیٰ قلق

MORE BY غلام مولیٰ قلق

    جو دل بر کی محبت دل سے بدلے

    تو لوں امید لا حاصل سے بدلے

    محال عقل کوئی شے نہیں ہے

    جو آسانی مری مشکل سے بدلے

    جہاں ہے کور اور خورشید محجوب

    کہاں تک شمع ہر محفل سے بدلے

    تہی دست محبت تو بھی سمجھو

    جو جم ساغر کو جام گل سے بدلے

    ہر اک کو جان دینے کی خوشی ہو

    اجل گر ناوک قاتل سے بدلے

    اگر ہو چیں جبیں قاتل دم قتل

    قیامت قامت قاتل سے بدلے

    ابھی ہم تو عدو سے بھی بدل لیں

    جو غم کو غم سے دل کو دل سے بدلے

    کھلے احوال دل جب ناصحوں پر

    تہہ دریا اگر ساحل سے بدلے

    شبستاں چھوڑ کر لیلیٰ ہو مجنوں

    مری آغوش گر محمل سے بدلے

    نہ جنبش اک قدم ہو آسماں سے

    مری منزل اگر منزل سے بدلے

    بتوں کا جلوہ کعبے میں دکھا دیں

    ذرا تقویٰ دل مائل سے بدلے

    قلقؔ اس ظلم کا پھر کیا ٹھکانا

    اگر مقتول لے قاتل سے بدلے

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites