جو گل ہے یاں سو اس گل رخسار ساتھ ہے

محمد رفیع سودا

جو گل ہے یاں سو اس گل رخسار ساتھ ہے

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    جو گل ہے یاں سو اس گل رخسار ساتھ ہے

    کیا گل ہے وہ کہ جس کے یہ گل زار ساتھ ہے

    تو مست شب اندھیری اور اغیار ساتھ ہے

    جو دل میں آوے کہہ یہ گنہ گار ساتھ ہے

    خاموش عندلیب چمن تجھ سے کیا ہے بحث

    اپنا سخن تو مرغ گرفتار ساتھ ہے

    پیغام اس نگہ کا کہ جس میں ہے بوئے مہر

    کیا جانے کس کے آخری دیدار ساتھ ہے

    عقدہ نہ یہ کھلا کہ مرے دل سا پہلوان

    تجھ زلف کے بندھا ہوا اک تار ساتھ ہے

    کرتے تو ہو مرے مرض دل کا تم علاج

    یارو جو دل یہی ہے تو آزار ساتھ ہے

    سوداؔ کے ہاتھ کیوں کے لگے وہ متاع حسن

    لے نکلیں جس کو گھر سے تو بازار ساتھ ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY