جو ہونی تھی وہ ہم نشیں ہو چکی

حکیم محمد اجمل خاں شیدا

جو ہونی تھی وہ ہم نشیں ہو چکی

حکیم محمد اجمل خاں شیدا

MORE BYحکیم محمد اجمل خاں شیدا

    جو ہونی تھی وہ ہم نشیں ہو چکی

    مرے مدعا پر نہیں ہو چکی

    برا ہو مری ناتوانی ترا

    نگاہ دم واپسیں ہو چکی

    امید کرم کچھ نہ ساقی سے رکھ

    کہ اب وہ مے ساتگیں ہو چکی

    سناؤں اگر تا قیامت تو کیا

    کہانی مری دل نشیں ہو چکی

    کروں کس طرح اب میں عرض نیاز

    کہ باقی ہے در اور جبیں ہو چکی

    تراوش کہاں زخم دل میں وہ اب

    کہیں کچھ رہی ہے کہیں ہو چکی

    بس اب ہاتھ سے رکھ دو شیداؔ قلم

    تمہاری غزل کی زمیں ہو چکی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY