جو کھلی چمن میں نئی کلی تو وہ جشن صوت و صدا ہوا

منظور ہاشمی

جو کھلی چمن میں نئی کلی تو وہ جشن صوت و صدا ہوا

منظور ہاشمی

MORE BYمنظور ہاشمی

    جو کھلی چمن میں نئی کلی تو وہ جشن صوت و صدا ہوا

    کہیں بلبلیں ہوئیں نغمہ زن کہیں رقص باد صبا ہوا

    کوئی پھول خوشبو سے چور سا کوئی رنگ حلقہ نور سا

    کوئی حسن غیرت حور سا ترے نام سارا لکھا ہوا

    وہ بچھڑ گیا تو پتہ چلا کہ تھا سخت کتنا یہ حادثہ

    گیا نور جیسے چراغ کا کہ بدن سے عکس جدا ہوا

    جو سوار راہ زیاں کے تھے کہیں نام اب کے نہ کر سکے

    نہ جنوں میں سرخ ہوئی زمیں نہ سکوں میں دشت ہرا ہوا

    مری جنگ میرے ہی ساتھ تھی کہ حریف بھی تھا حلیف بھی

    کبھی دوستوں میں گھرا ہوا کبھی دشمنوں سے ملا ہوا

    وہ ہوا چلی کہ مرے چمن ہوئے راکھ اور دھویں کے بن

    کہ ہرے شجر بھی سلگ اٹھے یہ بھری بہار میں کیا ہوا

    مأخذ :
    • کتاب : Sukhan Aabaad (Pg. 8)
    • Author : Manzoor Hashmi
    • مطبع : Manzoor Hashmi (2005)
    • اشاعت : 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY