جو کچھ بھی گزرتا ہے مرے دل پہ گزر جائے

حمایت علی شاعر

جو کچھ بھی گزرتا ہے مرے دل پہ گزر جائے

حمایت علی شاعر

MORE BYحمایت علی شاعر

    جو کچھ بھی گزرتا ہے مرے دل پہ گزر جائے

    اترا ہوا چہرہ مری دھرتی کا نکھر جائے

    اک شہر صدا سینے میں آباد ہے لیکن

    اک عالم خاموش ہے جس سمت نظر جائے

    ہم بھی ہیں کسی کہف کے اصحاب کی مانند

    ایسا نہ ہو جب آنکھ کھلے وقت گزر جائے

    جب سانپ ہی ڈسوانے کی عادت ہے تو یارو

    جو زہر زباں پر ہے وہ دل میں بھی اتر جائے

    کشتی ہے مگر ہم میں کوئی نوح نہیں ہے

    آیا ہوا طوفان خدا جانے کدھر جائے

    میں سایہ کیے ابر کے مانند چلوں گا

    اے دوست جہاں تک بھی تری راہ گزر جائے

    میں کچھ نہ کہوں اور یہ چاہوں کہ مری بات

    خوشبو کی طرح اڑ کے ترے دل میں اتر جائے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    جو کچھ بھی گزرتا ہے مرے دل پہ گزر جائے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے