جو مشت خاک ہو اس خاکداں کی بات کرو

عبد المجید سالک

جو مشت خاک ہو اس خاکداں کی بات کرو

عبد المجید سالک

MORE BY عبد المجید سالک

    جو مشت خاک ہو اس خاکداں کی بات کرو

    زمیں پہ رہ کے نہ تم آسماں کی بات کرو

    کسی کی تابش‌ رخسار کا کہو قصہ

    کسی کے گیسوئے عنبر فشاں کی بات کرو

    نہیں ہوا جو طلوع آفتاب تو فی الحال

    قمر کا ذکر کرو کہکشاں کی بات کرو

    رہے گا مشغلۂ یاد رفتگاں کب تک

    گزر رہا ہے جو اس کارواں کی بات کرو

    یہی جہان ہے ہنگامہ زار سود و زیاں

    یہیں کے سود یہیں کے زیاں کی بات کرو

    اب اس چمن میں نہ صیاد ہے نہ ہے گلچیں

    کرو تو اب ستم باغباں کی بات کرو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY