جو نہ وہم و گمان میں آوے

غمگین دہلوی

جو نہ وہم و گمان میں آوے

غمگین دہلوی

MORE BYغمگین دہلوی

    جو نہ وہم و گمان میں آوے

    کس طرح تیرے دھیان میں آوے

    تجھ سے ہمدم رکھوں نہ پوشیدہ

    حال دل گر بیان میں آوے

    میری یہ آرزو ہے وقت مرگ

    اس کی آواز کان میں آوے

    میں نہ دوں گا جواب تو کہہ لے

    جو کہ تیری زبان میں آوے

    یہ شب وصل خیر سے گزرے

    تو مری جان جان میں آوے

    ہائے کیا ہو ابھی جو اے ہمدم

    وہ صنم اس مکان میں آوے

    گر کھلے چشم دل تو تجھ کو نظر

    وہ ہی سارے جہان میں آوے

    اس کی تعریف کیا کروں غمگیںؔ

    ہل اتیٰ جس کی شان میں آوے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY