جو نقش‌ برگ کرم ڈال ڈال ہے اس کا

حسن عزیز

جو نقش‌ برگ کرم ڈال ڈال ہے اس کا

حسن عزیز

MORE BYحسن عزیز

    جو نقش‌ برگ کرم ڈال ڈال ہے اس کا

    تو دشت آگ اگلتا جلال ہے اس کا

    دیار دیدہ و دل میں میں سوچتا ہوں اسے

    کہ اس سے آگے تصور محال ہے اس کا

    ادھوری بات ہے ذکر مقیم شہر جنوب

    ہر اک مسافر راہ شمال ہے اس کا

    بدن کے دشت میں اس کی ہی گونج ہے ہر سو

    جواب اس کے ہیں ہر اک سوال ہے اس کا

    اسی کا ہے یہ بھرا شہر دشت خالی بھی

    یہ بھیڑ اس کی ہے قحط‌ الرجال ہے اس کا

    میں سوچتا ہوں کہ تصویر خاک کو میری

    ہزار رنگ میں رنگنا کمال ہے اس کا

    وہ آئنہ بھی حسنؔ اس کے فن کا جادو ہے

    یہ چہرہ بھی ہنر لا زوال ہے اس کا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY