جو تجھ سے شور تبسم ذرا کمی ہوگی

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

جو تجھ سے شور تبسم ذرا کمی ہوگی

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BYوحشتؔ رضا علی کلکتوی

    جو تجھ سے شور تبسم ذرا کمی ہوگی

    ہمارے زخم جگر کی بڑی ہنسی ہوگی

    رہا نہ ہوگا مرا شوق قتل بے تحسیں

    زبان خنجر قاتل نے داد دی ہوگی

    تری نگاہ تجسس بھی پا نہیں سکتی

    اس آرزو کو جو دل میں کہیں چھپی ہوگی

    مرے تو دل میں وہی شوق ہے جو پہلے تھا

    کچھ آپ ہی کی طبیعت بدل گئی ہوگی

    بجھی دکھائی تو دیتی ہے آگ الفت کی

    مگر وہ دل کے کسی گوشے میں دبی ہوگی

    کوئی غزل میں غزل ہے یہ حضرت وحشتؔ

    خیال تھا کہ غزل آپ نے کہی ہوگی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY