جو اس کے سامنے میرا یہ حال آ جائے

وصی شاہ

جو اس کے سامنے میرا یہ حال آ جائے

وصی شاہ

MORE BYوصی شاہ

    جو اس کے سامنے میرا یہ حال آ جائے

    تو دکھ سے اور بھی اس پر جمال آ جائے

    مرا خیال بھی گھنگرو پہن کے ناچے گا

    اگر خیال کو تیرا خیال آ جائے

    ہر ایک شام نئے خواب اس پہ کاڑھیں گے

    ہمارے ہاتھ اگر تیری شال آ جائے

    انہی دنوں وہ مرے ساتھ چائے پیتا تھا

    کہیں سے کاش مرا پچھلا سال آ جائے

    میں اپنے غم کے خزانے کہاں چھپاؤں گا

    اگر کہیں سے کوئی اندمال آ جائے

    ہر ایک بار نئے ڈھنگ سے سجائیں تجھے

    ہمارے ہاتھ جو پھولوں کی ڈال آ جائے

    یہ ڈوبتا ہوا سورج ٹھہر نہ جائے وصیؔ

    اگر وہ سامنے وقت زوال آ جائے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے