جو اترا پھر نہ ابھرا کہہ رہا ہے

شمس الرحمن فاروقی

جو اترا پھر نہ ابھرا کہہ رہا ہے

شمس الرحمن فاروقی

MORE BYشمس الرحمن فاروقی

    جو اترا پھر نہ ابھرا کہہ رہا ہے

    یہ پانی مدتوں سے بہہ رہا ہے

    مرے اندر ہوس کے پتھروں کو

    کوئی دیوانہ کب سے سہہ رہا ہے

    تکلف کے کئی پردے تھے پھر بھی

    مرا تیرا سخن بے تہہ رہا ہے

    کسی کے اعتماد جان و دل کا

    محل درجہ بہ درجہ ڈھہ رہا ہے

    گھروندے پر بدن کے پھولنا کیا

    کرائے پر تو اس میں رہ رہا ہے

    کبھی چپ تو کبھی محو فغاں دل

    غرض اک گو مگو میں یہ رہا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY