جدائی کے صدموں کو ٹالے ہوئے ہیں

منیرؔ  شکوہ آبادی

جدائی کے صدموں کو ٹالے ہوئے ہیں

منیرؔ  شکوہ آبادی

MORE BYمنیرؔ  شکوہ آبادی

    جدائی کے صدموں کو ٹالے ہوئے ہیں

    چلے جاؤ ہم دل سنبھالے ہوئے ہیں

    زمانے کی فکروں نے کھایا ہے ہم کو

    ہزاروں کے منہ کے نوالے ہوئے ہیں

    گزند اپنے ہاتھوں سے پہنچا ہے ہم کو

    یہ سانپ آستینوں کے پالے ہوئے ہیں

    نہیں نام کو ان میں بوئے مروت

    یہ گل رو مرے دیکھے بھالے ہوئے ہیں

    نہیں اعتبار ایک دم زندگی کا

    ازل سے قضا کے حوالے ہوئے ہیں

    ہزاروں کو تھے سرفروشی کے دعوے

    تصدق فدا ہونے والے ہوئے ہیں

    ہم آواز ہیں عیش و غم دونوں لیکن

    ترانے یہ ٹھہرے وہ نالے ہوئے ہیں

    منیرؔ اب رہ حق میں لغزش نہ ہوگی

    ید اللہ مجھ کو سنبھالے ہوئے ہیں

    مآخذ:

    • کتاب : Intekhab-e-Kalam Muneer Shikohabadi (Pg. 54)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY