جنوں کا کوئی فسانہ تو ہاتھ آنے دو

خالد ملک ساحل

جنوں کا کوئی فسانہ تو ہاتھ آنے دو

خالد ملک ساحل

MORE BYخالد ملک ساحل

    جنوں کا کوئی فسانہ تو ہاتھ آنے دو

    میں رو پڑوں گا بہانہ تو ہاتھ آنے دو

    میں اپنی ذات کے روشن کروں گا ویرانے

    قبولیت کا زمانہ تو ہاتھ آنے دو

    میں روپ اور سنواروں گا داستانوں کے

    کسی کا قصہ پرانا تو ہاتھ آنے دو

    مری نظر میں زمانے کی کج ادائی ہے

    نشاں بہت ہیں نشانہ تو ہاتھ آنے دو

    خرید لوں گا میں دنیا ضمیر کی ساحلؔ

    ذرا رکو یہ خزانہ تو ہاتھ آنے دو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY