جوئے کم آب سے اک تیز سا جھرنا ہوا میں

رفیق راز

جوئے کم آب سے اک تیز سا جھرنا ہوا میں

رفیق راز

MORE BYرفیق راز

    جوئے کم آب سے اک تیز سا جھرنا ہوا میں

    تیری جانب ہوں رواں شور مچاتا ہوا میں

    مجھ سے خالی نہیں اب ایک بھی ذرہ ہے یہاں

    دیکھ یہ تنگ زمیں اور یہ پھیلا ہوا میں

    دیکھ کر وسعت صحرائے تپاں لرزاں ہوں

    ساحل دیدۂ نمناک پہ ٹھہرا ہوا میں

    پا بہ زنجیر ادھر تیز ہوا اور ادھر

    خاک کے تخت پہ سلطان سا بیٹھا ہوا میں

    کوئی خورشید سا دنیا پہ چمکتا ہوا تو

    کسی دیوار سے سایہ سا نکلتا ہوا میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے