کار خلوص یار کا مجھ کو یقین آ گیا

پیرزادہ قاسم

کار خلوص یار کا مجھ کو یقین آ گیا

پیرزادہ قاسم

MORE BYپیرزادہ قاسم

    کار خلوص یار کا مجھ کو یقین آ گیا

    اتنا شدید وار تھا مجھ کو یقین آ گیا

    بس یوں ہی کچھ گماں سا تھا کوئی پس سخن بھی ہے

    در جو لب کشا ہوا مجھ کو یقین آ گیا

    پھر وہ ہوا کا قہقہہ کان میں گونجنے لگا

    اور بھی اک دیا بجھا مجھ کو یقین آ گیا

    دائرہ وار تھا سفر عشق جنوں صفات کا

    ہجر و وصال کچھ نہ تھا مجھ کو یقین آ گیا

    اب مرا درد بجھ گیا اب مرا زخم بھر چلا

    پھر وہی دوست آئے گا مجھ کو یقین آ گیا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    پیرزادہ قاسم

    پیرزادہ قاسم

    پیرزادہ قاسم

    پیرزادہ قاسم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY