کاش میں تجھ سا بے وفا ہوتا

آتش اندوری

کاش میں تجھ سا بے وفا ہوتا

آتش اندوری

MORE BYآتش اندوری

    کاش میں تجھ سا بے وفا ہوتا

    پھر مجھے تجھ سے کیا گلہ ہوتا

    عشق ہوتا ہے کیا پتا ہوتا

    گر پرندوں سے واسطہ ہوتا

    بول کے مجھ سے گر جدا ہوتا

    ملنے جلنے کا سلسلہ ہوتا

    یوں ہو کہ گھر بنائیں دیواریں

    رات ہوتے ہی گھر گیا ہوتا

    بے وفائی کا سرخ رنگ بھی ہے

    عشق میں ورنہ کیا مزہ ہوتا

    خود پہ گر اختیار ہوتا تو

    دور میں تجھ سے جا چکا ہوتا

    حصے میں آتا صرف امیروں کے

    عشق پیسوں میں گر بکا ہوتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY