کاش تم سمجھ سکتیں زندگی میں شاعر کی ایسے دن بھی آتے ہیں

سلام ؔمچھلی شہری

کاش تم سمجھ سکتیں زندگی میں شاعر کی ایسے دن بھی آتے ہیں

سلام ؔمچھلی شہری

MORE BYسلام ؔمچھلی شہری

    کاش تم سمجھ سکتیں زندگی میں شاعر کی ایسے دن بھی آتے ہیں

    جب اسی کے پروردہ چاند اس پہ ہنستے ہیں پھول مسکراتے ہیں

    اب تو میرے شہ پارے جو تم ہی سے تھے منسوب یوں جھلک دکھاتے ہیں

    دور ایک مندر میں کچھ دیے مرادوں کے جیسے جھلملاتے ہیں

    تم نے کب یہ سمجھا تھا میں نے کب یہ سوچا تھا زندگی کی راہوں میں

    چلتے چلتے دو راہی ایک موڑ پر آ کر خود ہی چھوٹ جاتے ہیں

    کام حسن کاروں کا آنسوؤں کی ضو دے کر کچھ کنول کھلا دینا

    موت حسن کاروں کی جب وہ خود شب غم میں یہ دیے بجھاتے ہیں

    تیز تر ہوائیں ہیں موت کی فضائیں ہیں رات سرد و جامد ہے

    احمریں ستارے بھی واقعی دوانے ہیں اب بھی مسکراتے ہیں

    الوداع اے میری شاہکار نظموں کی زرنگار شہزادی

    ماورائے الفت بھی کچھ نئے تقاضے ہیں جو مجھے بلاتے ہیں

    مأخذ :
    • کتاب : Intekhab-e-Kalam Salam Machhli Shahri (Pg. 126)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY