کاٹی ہے غم کی رات بڑے احترام سے

علی احمد جلیلی

کاٹی ہے غم کی رات بڑے احترام سے

علی احمد جلیلی

MORE BYعلی احمد جلیلی

    کاٹی ہے غم کی رات بڑے احترام سے

    اکثر بجھا دیا ہے چراغوں کو شام سے

    روشن ہے اپنی بزم اور اس اہتمام سے

    کچھ دل بھی جل رہا ہے چراغوں کے نام سے

    مدت ہوئی ہے خون تمنا کئے مگر

    اب تک ٹپک رہا ہے لہو دل کے جام سے

    صبح بہار ہم کو بلاتی رہی مگر

    ہم کھیلتے رہے کسی زلفوں کی شام سے

    ہر سانس پر ہے موت کا پہرا لگا ہوا

    آہستہ اے حیات گزر اس مقام سے

    کاٹی تمام عمر فریب بہار میں

    کانٹے سمیٹتے رہے پھولوں کے نام سے

    یہ اور بات ہے کہ علیؔ ہم نہ سن سکے

    آواز اس نے دی ہے ہمیں ہر مقام سے

    مأخذ :
    • کتاب : Mujalla Dastavez (Pg. 240)
    • Author : Aziz Nabeel
    • مطبع : Edarah Dastavez (2010)
    • اشاعت : 2010

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY