کب کوئی تجھ سا آئینہ رو یاں ہے دوسرا

جرأت قلندر بخش

کب کوئی تجھ سا آئینہ رو یاں ہے دوسرا

جرأت قلندر بخش

MORE BY جرأت قلندر بخش

    کب کوئی تجھ سا آئینہ رو یاں ہے دوسرا

    ہے تو ترا ہی عکس نمایاں ہے دوسرا

    پوچھ اس کی مت خبر جسے ناصح سیے تھا تو

    وہ دھجیاں اڑا یہ گریباں ہے دوسرا

    شکل ان کی یہ ہے جو کہ ہیں محو جمال یار

    ششدر کھڑا ہے ایک تو حیراں ہے دوسرا

    رخ اس کا دیکھیو شب مہتاب میں کوئی

    گویا زمیں پہ یہ مہ تاباں ہے دوسرا

    کیا دل جگر کی کہیے تمنائے وصل میں

    حسرت بھرا ہے ایک پر ارماں ہے دوسرا

    وادیٔ عشق میں ہمیں برسوں یوں ہی کٹے

    اک دشت طے کیا کہ بیاباں ہے دوسرا

    تیرے خرام ناز کے صدقے کہ کب کوئی

    ایسا چمن میں سرو خراماں ہے دوسرا

    غم خوار و مونس اب ترے بیمار کے ہیں یوں

    تسکین ایک دے تو ہراساں ہے دوسرا

    جرأتؔ غزل پڑھ اور اک ایسی کہ سب کہیں

    کب اس طرح کا کوئی غزل خواں ہے دوسرا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY