کبھی درد آشنا تیرا بھی قلب شادماں ہوگا

واصف دہلوی

کبھی درد آشنا تیرا بھی قلب شادماں ہوگا

واصف دہلوی

MORE BYواصف دہلوی

    کبھی درد آشنا تیرا بھی قلب شادماں ہوگا

    کبھی نام خدا تو بھی تو اے کم سن جواں ہوگا

    نہیں معلوم ان کی جلوہ گہ میں کیا سماں ہوگا

    نظر جب کامراں ہوگی تو اے دل تو کہاں ہوگا

    وہی اک سانس مدہوش حیات جاوداں ہوگا

    جو آہ سرد بن کر سوز غم کا ترجماں ہوگا

    لرز جائیں گے یہ مظلومی دل کے تماشائی

    اگر یہ خاک کا تو وہ کبھی آتش فشاں ہوگا

    جو سوز دل سے مضطر ہو کے آئے گا سر مژگاں

    تو خورشید قیامت میرا اشک خونچکاں ہوگا

    ستارے بن کے چمکیں گے دل برباد کے ذرے

    یہ دل برباد ہو کر بھی دلیل کارواں ہوگا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY