کبھی جو نور کا مظہر رہا ہے

علی اکبر عباس

کبھی جو نور کا مظہر رہا ہے

علی اکبر عباس

MORE BYعلی اکبر عباس

    کبھی جو نور کا مظہر رہا ہے

    وہ کن تاریکیوں میں مر رہا ہے

    کسی سورج کا ٹکڑا توڑ لائیں

    زمیں کا جسم ٹھنڈا پڑ رہا ہے

    کہیں آثار ڈھونڈیں زندگی کے

    کبھی یہ چاند میرا گھر رہا ہے

    متاع آسماں بھی لٹ نہ جائے

    ستارے پر ستارہ گر رہا ہے

    ہوا میں لفظ لکھے جا رہے ہیں

    کوئی زخمی پرندہ اڑ رہا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY