کبھی نغمۂ غم آرزو کبھی زندگی کی پکار ہم

پیام فتحپوری

کبھی نغمۂ غم آرزو کبھی زندگی کی پکار ہم

پیام فتحپوری

MORE BY پیام فتحپوری

    کبھی نغمۂ غم آرزو کبھی زندگی کی پکار ہم

    کبھی خاک کوچۂ یار ہم کبھی شہریار بہار ہم

    کبھی چل پڑے تری راہ میں تو حد جنوں سے گزر گئے

    ترے انتظار میں ہو گئے کبھی نقش راہگزار ہم

    ہمیں کشتگان حیات سے ہیں جنون عشق کی عظمتیں

    کبھی ہنس پڑے تہ تیغ ہم کبھی جھوم اٹھے سر دار ہم

    رہے مضطرب کبھی مدتوں غم دہر کی کڑی دھوپ میں

    جو سکوں ملا ہے تو سو لیے کبھی زیر گیسوئے یار ہم

    تجھے پا سکیں کہ نہ پا سکیں کوئی زندگی کی لگن تو ہے

    کہ خوشی سے کیسے اجاڑ دیں تری آرزو کا دیار ہم

    غم زندگی سے شکست کیا رہ آرزو میں قدم بڑھا

    تو جو ساتھ ہو تو بدل بھی دیں یہ مزاج لیل و نہار ہم

    کبھی پاس آ کے نگاہ کر ہے یہ زندگی ترا آئنہ

    ترا روپ ہم ترا پیار ہم تری آرزو کا سنگار ہم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY