کبھی شعر و نغمہ بن کے کبھی آنسوؤں میں ڈھل کے

خمارؔ بارہ بنکوی

کبھی شعر و نغمہ بن کے کبھی آنسوؤں میں ڈھل کے

خمارؔ بارہ بنکوی

MORE BY خمارؔ بارہ بنکوی

    کبھی شعر و نغمہ بن کے کبھی آنسوؤں میں ڈھل کے

    وہ مجھے ملے تو لیکن ملے صورتیں بدل کے

    یہ وفا کی سخت راہیں یہ تمہارے پائے نازک

    نہ لو انتقام مجھ سے مرے ساتھ ساتھ چل کے

    وہی آنکھ بے بہا ہے جو غم جہاں میں ڈوبے

    وہی جام جام ہے جو بغیر فرق چھلکے

    نہ تو ہوش سے تعارف نہ جنوں سے آشنائی

    یہ کہاں پہنچ گئے ہم تری بزم سے نکل کے

    یہ چراغ انجمن تو ہیں بس ایک شب کے مہماں

    تو جلا وہ شمع اے دل جو بجھے کبھی نہ جل کے

    کوئی اے خمارؔ ان کو مرے شعر نذر کر دے

    جو مخالفین مخلص نہیں معترف غزل کے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    خمارؔ بارہ بنکوی

    خمارؔ بارہ بنکوی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY