کبھی سورج ہے کبھی زہرہ جمالوں جیسا

ریحانہ قمر

کبھی سورج ہے کبھی زہرہ جمالوں جیسا

ریحانہ قمر

MORE BYریحانہ قمر

    کبھی سورج ہے کبھی زہرہ جمالوں جیسا

    کیوں وہ لگتا ہے مجھے میری مثالوں جیسا

    ہر طرح سے وہ بہت اچھا ہے لیکن اس کو

    دیکھنا چاہتی ہوں اپنے خیالوں جیسا

    چاہتی ہوں کہ کروں اس سے محبت کھل کر

    لیکن انجام نہ ہو چاہنے والوں جیسا

    کس طرح مان لوں میں اس کی نصابی باتیں

    اس کا موقف ہے کتابوں کے حوالوں جیسا

    میری ضد ہے اسے حل کر کے رہوں گی میں بھی

    وہ جو لگتا ہے ریاضی کے سوالوں جیسا

    آج کے دن بھی گھٹا کھل کے نہ برسے شاید

    آج کا دن بھی ہے وحشت میں غزالوں جیسا

    اے محبت میں مجھے چاند سا کہنے والے

    مجھ قمرؔ کو نہ سمجھ میری مثالوں جیسا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY