کبھی یقیں سے ہوئی اور کبھی گماں سے ہوئی

فراغ روہوی

کبھی یقیں سے ہوئی اور کبھی گماں سے ہوئی

فراغ روہوی

MORE BYفراغ روہوی

    کبھی یقیں سے ہوئی اور کبھی گماں سے ہوئی

    ترے حضور رسائی کہاں کہاں سے ہوئی

    فلک نہ ماہ منور نہ کہکشاں سے ہوئی

    کھلی جب آنکھ ملاقات خاک داں سے ہوئی

    نہ فلسفی نہ مفکر نہ نکتہ داں سے ہوئی

    ادا جو بات ہمیشہ تری زباں سے ہوئی

    کھلی نہ مجھ پہ بھی دیوانگی مری برسوں

    مرے جنون کی شہرت ترے بیاں سے ہوئی

    جو تیرے نام سے منسوب میرا نام ہوا

    تو شہر بھر کو عداوت بھی میری جاں سے ہوئی

    سنا کے سب کو اکیلا ہی رو رہا تھا میں

    کسی کی آنکھ نہ تر میری داستاں سے ہوئی

    جنہیں تھا ڈوبنا ان کو بھی دے دیا رستہ

    کبھی کبھی یہ خطا بحر بیکراں سے ہوئی

    فراغؔ ہاتھ سے کیا دامن خرد چھوٹا

    کہ سر پہ سنگ کی بارش جہاں تہاں سے ہوئی

    مأخذ :
    • کتاب : Ghazal Ke Rang (Pg. 263)
    • Author : Akram Naqqash, Sohil Akhtar
    • مطبع : Aflaak Publications, Gulbarga (2014)
    • اشاعت : 2014

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY