کڑھاؤ رکھ کے تخیل پہ آسمان تلے

منّان بجنوری

کڑھاؤ رکھ کے تخیل پہ آسمان تلے

منّان بجنوری

MORE BYمنّان بجنوری

    کڑھاؤ رکھ کے تخیل پہ آسمان تلے

    یقیں کے تیل میں لوگوں نے سب گمان تلے

    عقیدتوں کا عجب فلسفہ ہے کیا کیا جائے

    کہ اس میں انگلیاں دب جاتی ہیں کمان تلے

    زبان آگ سہی دل ہمارا جل تھل ہے

    تپش پہنچتی نہیں لو کی شمع دان تلے

    فساد بالا نشینوں کی شہہ پہ ہوتا ہیں

    وگرنہ رہتے نہیں دانت کیا زبان تلے

    شعور مسند اوہام پر ہے جلوہ فگن

    کبھی بٹھاؤ حقیقت کے سائبان تلے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے