کہہ رہا ابلیس اب شیطان سے

اشک الماس

کہہ رہا ابلیس اب شیطان سے

اشک الماس

MORE BY اشک الماس

    کہہ رہا ابلیس اب شیطان سے

    فکر فردا چھین اس انسان سے

    کیا ہمارا نام اس میں درج ہے

    آپ نے پوچھا کبھی رضوان سے

    میل کا پتھر کوئی لا دے کہ میں

    تھک گیا یاقوت اور مرجان سے

    جان پاتے کیسے ہم راز حیات

    راز کن نکلا نہیں جزدان سے

    جانے کب اس رات کی ہوگی سحر

    کب کوئی اٹھے گا اس ایوان سے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY