کہاں سے آ گیا کہاں یہ شام بھی کہاں ہوئی

پیام فتحپوری

کہاں سے آ گیا کہاں یہ شام بھی کہاں ہوئی

پیام فتحپوری

MORE BYپیام فتحپوری

    کہاں سے آ گیا کہاں یہ شام بھی کہاں ہوئی

    نہ ہم نفس نہ ہم زباں یہ شام بھی کہاں ہوئی

    بجھی نظر بجھے قدم نہ راہبر نہ ہم سفر

    نہ رہ گزر نہ کارواں یہ شام بھی کہاں ہوئی

    نہ شمع دل نہ شمع رخ نجوم شب نہ ماہ شب

    نگاہ و دل دھواں دھواں یہ شام بھی کہاں ہوئی

    نہ گیسوؤں کی چھاؤں ہے نہ عارضوں کی چاندنی

    نہ مانگ کی وہ کہکشاں یہ شام بھی کہاں ہوئی

    حیات غم کے بوجھ سے دبی دبی تھکی تھکی

    لٹی لٹی سی بزم جاں یہ شام بھی کہاں ہوئی

    لگی ہے جیسے آگ سی چتا میں جل رہا ہوں میں

    پگھل رہے ہیں جسم و جاں یہ شام بھی کہاں ہوئی

    پیامؔ اس مقام پر ہے آج دل کا کارواں

    جہاں زمیں نہ آسماں یہ شام بھی کہاں ہوئی

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY