کہتے ہو اب مرے مظلوم پہ بیداد نہ ہو

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

کہتے ہو اب مرے مظلوم پہ بیداد نہ ہو

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BYوحشتؔ رضا علی کلکتوی

    کہتے ہو اب مرے مظلوم پہ بیداد نہ ہو

    ستم ایجاد ہو پھر کیوں ستم ایجاد نہ ہو

    نہیں پیمان وفا تم نے نہیں باندھا تھا

    وہ فسانہ ہی غلط ہے جو تمہیں یاد نہ ہو

    تم نے دل کو مرے کچھ ایسا کیا ہے ناشاد

    شاد کرنا بھی جو اب چاہو تو یہ شاد نہ ہو

    جو گرفتار تمہارا ہے وہی ہے آزاد

    جس کو آزاد کرو تم کبھی آزاد نہ ہو

    میرا مقصد کہ وہ خوش ہوں مری خاموشی سے

    ان کو اندیشہ کہ یہ بھی کوئی فریاد نہ ہو

    میں نہ بھولوں غم عشق کا احساں وحشتؔ

    ان کو پیمان محبت جو نہیں یاد نہ ہو

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    کہتے ہو اب مرے مظلوم پہ بیداد نہ ہو نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY