کہوں کس سے رات کا ماجرا نئے منظروں پہ نگاہ تھی

احمد مشتاق

کہوں کس سے رات کا ماجرا نئے منظروں پہ نگاہ تھی

احمد مشتاق

MORE BYاحمد مشتاق

    دلچسپ معلومات

    Shamsur Rahman Faruqi's historic novel "Kai Chaand the Sar-e-Aasmaan", the title has been picked from second sher of this ghazal.

    کہوں کس سے رات کا ماجرا نئے منظروں پہ نگاہ تھی

    نہ کسی کا دامن چاک تھا نہ کسی کی طرف کلاہ تھی

    کئی چاند تھے سر آسماں کہ چمک چمک کے پلٹ گئے

    نہ لہو مرے ہی جگر میں تھا نہ تمہاری زلف سیاہ تھی

    دل کم الم پہ وہ کیفیت کہ ٹھہر سکے نہ گزر سکے

    نہ حضر ہی راحت روح تھا نہ سفر میں رامش راہ تھی

    مرے چار دانگ تھی جلوہ گر وہی لذت طلب سحر

    مگر اک امید شکستہ پر کہ مثال درد سیاہ تھی

    وہ جو رات مجھ کو بڑے ادب سے سلام کر کے چلا گیا

    اسے کیا خبر مرے دل میں بھی کبھی آرزوئے گناہ تھی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    کہوں کس سے رات کا ماجرا نئے منظروں پہ نگاہ تھی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY