کیفیت ہی کیفیت میں ہم کہاں تک آ گئے

سید مبین علوی خیرآبادی

کیفیت ہی کیفیت میں ہم کہاں تک آ گئے

سید مبین علوی خیرآبادی

MORE BYسید مبین علوی خیرآبادی

    کیفیت ہی کیفیت میں ہم کہاں تک آ گئے

    بے خودی وہ تھی کہ ان کے آستاں تک آ گئے

    وقت کی رو میں بہے تھے جانے کس انداز میں

    یہ خبر بھی ہو نہ پائی ہم کہاں تک آ گئے

    خود سکون آگہی نے روح کو تسکین دی

    ہم بچھڑ کر جب غبار کارواں تک آ گئے

    سر‌ فروشان وفا کو بھی نہ چھوڑا عشق نے

    مرحلے ساری خطا کے مہرباں تک آ گئے

    راہ منزل کی جہاں پہچاننا دشوار تھی

    زندگی تیرے قدم ایسے نشاں تک آ گئے

    ہر قدم پر ہم کو دنیا روکتی ہی رہ گئی

    ایک جذبہ تھا جو تیرے آستاں تک آ گئے

    ملنا تھا حسن بیاں کو ایک اظہار خلوص

    لفظ و معنی خود بخود اردو زباں تک آ گئے

    دیکھنا ہے فیصلہ موج حوادث کا مبینؔ

    کشتئ دل لے کے بحر بیکراں تک آ گئے

    مآخذ:

    • کتاب : Pirahn-e-harf (Pg. 26)
    • Author : Mubeen Alvi Khairabadi
    • مطبع : Mubeen Alvi Khairabadi (1999)
    • اشاعت : 1999

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY