کئی نا آشنا چہرے حجابوں سے نکل آئے

خوشبیر سنگھ شادؔ

کئی نا آشنا چہرے حجابوں سے نکل آئے

خوشبیر سنگھ شادؔ

MORE BYخوشبیر سنگھ شادؔ

    کئی نا آشنا چہرے حجابوں سے نکل آئے

    نئے کردار ماضی کی کتابوں سے نکل آئے

    ہم اپنے گھر میں بھی اب بے سر و ساماں سے رہتے ہیں

    ہمارے سلسلے خانہ خرابوں سے نکل آئے

    ہمیں سیراب کرنے کے لیے دریا مچلتے تھے

    مگر یہ پیاس کے رشتے سرابوں سے نکل آئے

    چلو اچھا ہوا آخر تمہاری نیند بھی ٹوٹی

    چلو اچھا ہوا اب تم بھی خوابوں سے نکل آئے

    نہ جانے شادؔ ان کا قرض میں کیسے چکاؤں گا

    مرے بھی نام کچھ لمحے حسابوں سے نکل آئے

    مآخذ:

    • کتاب : Zara ye Dhoop Dhal Jaye (Pg. 74)
    • Author : Khushbir Singh Shaad
    • مطبع : Suman Parkashan, Bhadoriya Complex, Lucknow (2005)
    • اشاعت : 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY