کیسا لمحہ آن پڑا ہے

بقا بلوچ

کیسا لمحہ آن پڑا ہے

بقا بلوچ

MORE BYبقا بلوچ

    کیسا لمحہ آن پڑا ہے

    ہنستا گھر ویران پڑا ہے

    بستر پر کچھ پھول پڑے ہیں

    آنگن میں گلدان پڑا ہے

    کرچی کرچی سپنے سارے

    دل میں اک ارمان پڑا ہے

    لوگ چلے ہیں صحراؤں کو

    اور نگر سنسان پڑا ہے

    اک جانب اک نظم کے ٹکڑے

    اک جانب عنوان پڑا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY