کل پردیس میں یاد آئے گی دھیان میں رکھ

اظہر ادیب

کل پردیس میں یاد آئے گی دھیان میں رکھ

اظہر ادیب

MORE BYاظہر ادیب

    کل پردیس میں یاد آئے گی دھیان میں رکھ

    اپنے شہر کی مٹی بھی سامان میں رکھ

    سارے جسم کو لے کر گھوم زمانے میں

    بس اک دل کی دھڑکن پاکستان میں رکھ

    جانے کس رستے سے کرنیں آ جائیں

    دل دہلیز پہ آنکھیں روشندان میں رکھ

    جھیل میں اک مہتاب ضروری ہوتا ہے

    کوئی تمنا اس چشم حیران میں رکھ

    ہم سے شرط لگانے کی اک صورت ہے

    اپنے سارے خواب یہاں میدان میں رکھ

    جب بھی چاہوں تیرا چہرا سوچ سکوں

    بس اتنی سی بات مرے امکان میں رکھ

    تتلی رستہ بھول کے آ بھی سکتی ہے

    کاغذ کے یہ پھول ابھی گلدان میں رکھ

    اپنے دل سے رسوائی کا خوف نکال

    اظہرؔ اب تصویر مری دالان میں رکھ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے