کلیوں کا تبسم ہو، کہ تم ہو کہ صبا ہو

ہری چند اختر

کلیوں کا تبسم ہو، کہ تم ہو کہ صبا ہو

ہری چند اختر

MORE BYہری چند اختر

    کلیوں کا تبسم ہو، کہ تم ہو کہ صبا ہو

    اس رات کے سناٹے میں، کوئی تو صدا ہو

    یوں جسم مہکتا ہے ہوائے گل تر سے!

    جیسے کوئی پہلو سے ابھی اٹھ کے گیا ہو

    دنیا ہمہ تن گوش ہے، آہستہ سے بولو

    کچھ اور قریب آؤ، کوئی سن نہ رہا ہو

    یہ رنگ، یہ انداز نوازش تو وہی ہے

    شاید کہ کہیں پہلے بھی تو مجھ سے ملا ہو

    یوں رات کو ہوتا ہے گماں دل کی صدا پر

    جیسے کوئی دیوار سے سر پھوڑ رہا ہو

    دنیا کو خبر کیا ہے مرے ذوق نظر کی

    تم میرے لیے رنگ ہو، خوشبو ہو، ضیا ہو

    یوں تیری نگاہوں میں اثر ڈھونڈ رہا ہوں

    جیسے کہ تجھے دل کے دھڑکنے کا پتا ہو

    اس درجہ محبت میں تغافل نہیں اچھا

    ہم بھی جو کبھی تم سے گریزاں ہوں تو کیا ہو

    ہم خاک کے ذروں میں ہیں اخترؔ بھی، گہر بھی

    تم بام فلک سے، کبھی اترو تو پتا ہو

    RECITATIONS

    فہد حسین

    فہد حسین,

    فہد حسین

    کلیوں کا تبسم ہو، کہ تم ہو کہ صبا ہو فہد حسین

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے