کمی نہ کی ترے وحشی نے خاک اڑانے میں

فراق گورکھپوری

کمی نہ کی ترے وحشی نے خاک اڑانے میں

فراق گورکھپوری

MORE BYفراق گورکھپوری

    کمی نہ کی ترے وحشی نے خاک اڑانے میں

    جنوں کا نام اچھلتا رہا زمانے میں

    فراقؔ دوڑ گئی روح سی زمانے میں

    کہاں کا درد بھرا تھا مرے فسانے میں

    جنوں سے بھول ہوئی دل پہ چوٹ کھانے میں

    فراقؔ دیر ابھی تھی بہار آنے میں

    وہ کوئی رنگ ہے جو اڑ نہ جائے اے گل تر

    وہ کوئی بو ہے جو رسوا نہ ہو زمانے میں

    وہ آستیں ہے کوئی جو لہو نہ دے نکلے

    وہ کوئی حسن ہے جھجکے جو رنگ لانے میں

    یہ گل کھلے ہیں کہ چوٹیں جگر کی ابھری ہیں

    نہاں بہار تھی بلبل ترے ترانے میں

    بیان شمع ہے حاصل یہی ہے جلنے کا

    فنا کی کیفیتیں دیکھ جھلملانے میں

    کسی کی حالت دل سن کے اٹھ گئیں آنکھیں

    کہ جان پڑ گئی حسرت بھرے فسانے میں

    اسی کی شرح ہے یہ اٹھتے درد کا عالم

    جو داستاں تھی نہاں تیرے آنکھ اٹھانے میں

    غرض کہ کاٹ دیے زندگی کے دن اے دوست

    وہ تیری یاد میں ہوں یا تجھے بھلانے میں

    ہمیں ہیں گل ہمیں بلبل ہمیں ہوائے چمن

    فراقؔ خواب یہ دیکھا ہے قید خانے میں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    کمی نہ کی ترے وحشی نے خاک اڑانے میں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY