کمرے میں دھواں درد کی پہچان بنا تھا

ابرار اعظمی

کمرے میں دھواں درد کی پہچان بنا تھا

ابرار اعظمی

MORE BY ابرار اعظمی

    کمرے میں دھواں درد کی پہچان بنا تھا

    کل رات کوئی پھر مرا مہمان بنا تھا

    بستر میں چلی آئیں مچلتی ہوئی کرنیں

    آغوش میں تکیہ تھا سو انجان بنا تھا

    وہ میں تھا مرا سایہ تھا یا سائے کا سایہ

    آئینہ مقابل تھا میں حیران بنا تھا

    نظروں سے چراتا رہا جسموں کی حلاوت

    سنتے ہیں کوئی صاحب ایمان بنا تھا

    ندی میں چھپا چاند تھا ساحل پہ خموشی

    ہر رنگ لہو رنگ کا زندان بنا تھا

    حرفوں کا بنا تھا کہ معانی کا خزینہ

    ہر شعر مرا بحث کا عنوان بنا تھا

    مآخذ:

    • کتاب : shab-khoon(web site) (Pg. 71)
    • اشاعت : 43

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY