کرب ہرے موسم کا تب تک سہنا پڑتا ہے

آزاد گلاٹی

کرب ہرے موسم کا تب تک سہنا پڑتا ہے

آزاد گلاٹی

MORE BYآزاد گلاٹی

    کرب ہرے موسم کا تب تک سہنا پڑتا ہے

    پت جھڑ میں تو پات کو آخر جھڑنا پڑتا ہے

    کب تک اوروں کے سانچے میں ڈھلتے جائیں گے

    کسی جگہ تو ہم کو آخر اڑنا پڑتا ہے

    صرف اندھیرے ہی سے دیے کی جنگ نہیں ہوتی

    تیز ہواؤں سے بھی اس کو لڑنا پڑتا ہے

    سہی سلامت آگے بڑھتے رہنے کی خاطر

    کبھی کبھی تو خود بھی پیچھے ہٹنا پڑتا ہے

    شعر کہیں تو عقل و جنوں کی سرحد پر رک کر

    لفظوں میں جذبوں کے نگوں کو جڑنا پڑتا ہے

    جیون جینا اتنا بھی آسان نہیں آزادؔ

    سانس سانس میں ریزہ ریزہ کٹنا پڑتا ہے

    مآخذ :
    • کتاب : Mujalla Dastavez (Pg. 563)
    • Author : Aziz Nabeel
    • مطبع : Edarah Dastavez (2013-14)
    • اشاعت : 2013-14

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY