کرب کیا ہے تجھے بتاتا ہوں

اسد رضا

کرب کیا ہے تجھے بتاتا ہوں

اسد رضا

MORE BYاسد رضا

    کرب کیا ہے تجھے بتاتا ہوں

    درد بو کر میں غم اگاتا ہوں

    ایک دیدار کے لیے ان کی

    دھول آنکھوں میں ڈال آتا ہوں

    شعر کہنا بہت ہی مشکل ہے

    روز دو پاؤ خوں جلاتا ہوں

    صرف کوزہ گری کا ماہر ہوں

    صرف مورت تری بناتا ہوں

    خون نکلے گا تیری آنکھوں سے

    میں تجھے کربلا سناتا ہوں

    ہجر کہتا ہے خون پینا ہے

    ماس جبکہ اسے کھلاتا ہوں

    غور سے سن عدو سحرؔ جی کے

    دن میں تارے تجھے دکھاتا ہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY