کشتی ہے تباہ دل شدوں کی

جوشش عظیم آبادی

کشتی ہے تباہ دل شدوں کی

جوشش عظیم آبادی

MORE BYجوشش عظیم آبادی

    کشتی ہے تباہ دل شدوں کی

    لینا خبر اپنے بے خودوں کی

    اے سرو سہی کے ایک گلشن

    چلیو مت چال خوش قدوں کی

    کیوں کر وو کرے سلوک ہم سے

    خاطر ہے عزیز حاسدوں کی

    تعمیر کنشت دل ہوا جب

    زاہد نہ بنا تھی مسجدوں کی

    کہنا مت مان واعظوں کا

    بیہودہ ہے بات بیہدوں کی

    داڑھی نہ رہے گی شیخ صاحب

    صحبت میں نہ بیٹھو امردوں کی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY